منی لانڈرنگ کیس میں اومنی گروپ کے سربراہ اور آصف زرداری کے دوست انور مجید صاحبزدے سمیت سپریم کورٹ سے گرفتار


  • بدھ
  • 2018-08-15
اسلام آباد:رپورٹ ۔ شبانہ برکت) جعلی بینک اکاؤنٹس منی لانڈرنگ کیس میں اومنی گروپ کے سربراہ اور آصف زرداری کے دوست انور مجید اور ان کے صاحبزدے عبدالغنی کو سپریم کورٹ کے باہر سے گرفتار کرلیا گیا۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ پانامہ جے آئی ٹی میں خفیہ اداروں کے افسران کو چوہدری نثار کے حکم پر شامل کیا گیا۔ سپریم کورٹ میں سابق صدر آصف علی زرداری کے قریبی دوست اور اومنی گروپ کے مالک انور مجید اور ان کے چاروں صاحبزادے پیش ہوئے، عدالت نے انور مجید کے وکیل شاہد حامد کی ضمانت قبل از گرفتاری کی استدعا مسترد کردی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ ایف آئی  اے انور مجید کو گرفتار کرنا چاہتی ہے تو کر لے، انور مجید اور ان کے صاحبزادے کمرہ عدالت سے باہر نکلے تو ایف آئی اے نے انور مجید اور صاحبزادے عبدالغنی کو گرفتار کرلیا۔ دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ پاناما جے آئی ٹی میں ایم آئی اور آئی ایس آئی کے نمائندے عدالت نے شامل نہیں کرائے تھے،جے آئی ٹی میں خفیہ اداروں کے افسران کو چوہدری نثار کے حکم پر شامل کیا گیا۔ عدالت نے ان کی شمولیت کے حوالے سے کوئی حکم نہیں دیا تھا جعلی بنک اکاؤنٹس کیس کی سماعت اٹھائیس اگست تک ملتوی کردی گئی۔ ایف آئی اے بے نامی اکاؤنٹس سے منی لانڈرنگ کے الزام میں بتیس افراد کیخلاف تحقیقات کر رہی ہے جن میں آصف علی زرداری اور فریال تالپور بھی شامل ہیں۔